آزادنہ شفاف انتخابات ہی ملک کی تقدیر بدل سکتا ہے،مولانا قادر لونی

0 7

جمعیت علماء اسلام نظریاتی پاکستان کے سنئیر نائب امیر مولناعبدالقادر لونی نے کہا کہ آزاد الیکشن کمیشن ، انتخابی اصلاحات شفاف انتخابی نظام اور جمہوریت کی استحکام کے لیے ناگزیر ہوچکا ہے آزادنہ شفاف انتخابات ہی ملک کی تقدیر بدل سکتا ہے

.الیکٹرانک ووٹنگ کی بجائے دھاندلی کی اصل ذمہ داروں، دھاندلی کی عوامل اور اسباب و محرکات کو بے نقاب کرنا ہوگا ملک کی بدقسمتی یہ ہے کہ جو اسٹیبلشمنٹ اور عالمی قوتوں کے درمیان طے پایا جاتا ہے وہی ملک کاحکمران بن جاتا ہے ملکی انتخابات میں عوامی رائے کا کوئی احترام نہیں رہا۔ ملک کے انتخابات میں مداخلت اور فارن فنڈنگ سے نہ پارلیمنٹ کی بالادستی رہی

اور نہ پارلیمنٹ کی فیصلوں کا کوئی وقار رہ چکا ہے بار بار کے تلخ تجربات کے باوجود آج تک مؤثر انتخابی نظام تشکیل نہ ہوا موجودہ بحران سے نکلنے کے لیے مؤثر انتخابی اصلاحات کے سوا کوئی راستہ باقی نہیں ان بنیادی امور کی طرف سنجیدگی کی ضرورت ہے انہوں نے کہا کہ قیام پاکستان سے لے کر آج تک دھاندلی زدہ اور طاقت کے بل پر حکمرانی سے ملک مسلسل سیاسی

اورمعاشی طور پر تباہ حالی کا شکار ہے اور قومی مختاری اور ملکی سالمیت بھی داؤ پر لگ چکی ہے۔عوام کی رائے کا تقدس اور اعتماد بحال نہ ہوجائےتو جمہوریت اپنے پاؤں پر کھڑا ہونا ممکن نہیں انہوں نے کہا کہ پارلیمنٹ کی بالادستی اور اس کی خود مختاری پوری قوم کا مشترکہ مسئلہ ہے المیہ یہ ہے کہ ملک کے ہر حکمران نےملک کو اسلام کی بالادستی اور جمہوری حکمرانی سے بہرہ ور کرنے کی بجائے ہمیشہ اپنے طبقاتی مفادات اور عالمی قوتوں کے ایجنڈے کے لیے کام کرنے کو ترجیح دی ہے۔ جس کی نتیجے میں سیاست و جمہوریت کے مستقبل بحران کی کیفیت سے دوچار ہے انہوں نے کہا کہ ضد اور ہٹ دھرمی حکومت گرانا اور حکومت نہ کرنے کی روایات مسئلے کاحل نہیں انتخابات کو آزادانہ اور شفاف بنانے کیلئے اہم اقدامات کرنے کی ضرورت ہے۔ یہ صرف کسی ایک جماعت یافرد کا مسئلہ نہیں بلکہ قومی مفاد اور جمہوریت کی بقاء کا معاملہ ہے

You might also like

Leave A Reply

Your email address will not be published.