حکومت کا ترقیاتی فنڈز دینے کے حوالے سے مقف سامنے آ گیا

ترقیاتی فنڈ ارکان اسمبلی کا حق ہے لیکن نقد رقم کسی کو نہیں دی، وفاقی وزیر شفقت محمود

0 53

حکومت کا ترقیاتی فنڈز دینے کے حوالے سے مقف سامنے آ گیا

اسلام آباد(ڈیلی صحافت کوئٹہ ویب ڈیسک )وفاقی وزیر تعلیم شفقت محمود نے کہا ہے کہ ترقیاتی فنڈ ارکان اسمبلی کاحق ہوتا ہینقدرقم کسی کونہیں دی گئی اسکیمز دی گئی ہیں۔ شفقت محمود نے کہا ہے کہ سینیٹ الیکشن میں سب کومعلوم ہیمنڈیاں لگتی ہیں گزشتہ سینیٹ انتخابات میں تو ریٹ 40،50 کروڑتک گئے ایسی منڈیوں کی روک تھام کیلئیہم اوپن بیلٹ کی طرف گئے ہم توکہہ رہی ہیں سینیٹ انتخابات اوپن بیلٹ کردیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ چیئرمین سینیٹ کیخلاف ووٹ دینیوالوں کان لیگ کوپتہ ہی نہیں لگا لیکن ہماری پارٹی میں جولوگ فروخت ہوئیانہیں پارٹی سینکالاگیا، میریپاس ابھی تفصیل نہیں کن 20 لوگوں کو نکالا گیا تھا مگر 20 لوگوں کوجنہوں نیخریداان کیخلاف بھی کارروائی ہونی چاہیے۔

شفقت محمود نے کہا کہ سنا ہے اصغرخان کیس کا فیصلہ محفوظ کیا گیا ہے میں تو چاہتا ہوں اصغرخان کیس کافیصلہ آنا چاہیے۔واضح رہے کہ سپریم کورٹ آف پاکستان نے ارکان اسمبلی کو ترقیاتی فنڈز دینے سے متعلق کیس کا تحریری حکم نامہ جاری کردیا، عدالت نے حکم دیا کہ بتایا جائے وزیراعظم کا ترقیاتی فنڈز دینا آئیں کے مطابق ہے؟ عدالت کہہ چکی کہ فنڈز کی اجازت لینے کا معامہ پہلے اسمبلی میں پیش کیا جائے،

ترقیاتی منصوبوں کیلئے فنڈز دینے سے متعلق کیس کا تحریری حکم نامہ جاری کردیا

ترقیاتی فنڈز آئین قانون کے مطابق نہ ہوئے تو کاروائی ہوگی، کیس کی مزید سماعت 10فرروی تک ملتوی کردی گئی ہے۔تفصیلات کے مطابق سپریم کورٹ آف پاکستان نے وزیراعظم کی جانب سے ارکان اسمبلی کو ترقیاتی منصوبوں کیلئے فنڈز دینے سے متعلق کیس کا تحریری حکم نامہ جاری کردیا ہے۔ سپریم کورٹ میں جسٹس قاضی فائز عیسی اور جسٹس مقبول پر مشتمل 2 رکنی بنچ نے فنڈز دینے سے متعلق کیس کی سماعت کی۔ عدالت عظمی نے وفاقی حکومت، وزیراعظم کے پرنپسل سیکرٹری، سیکرٹری فنانس، کابینہ، چیف سیکرٹری، اٹارنی جنرل اور صوبوں کے ایڈوکیٹ جنرلز کو نوٹسز جاری کردیے ہیں۔

عدالت نے تحری حکم نامہ میں کہا کہ فریقین کے جوابات سے مطمئن نہ ہوئے تو معاملہ چیف جسٹس کو بھیجا جائے گا۔ انگریزی اخبار کی خبر پر نوٹس لیا گیا جس کی تردید نہیں ہوئی۔ بتایا جائے وزیراعظم کا ترقیاتی فنڈز دینا آئیں کے مطابق ہے؟ آئین کے مطابق کسی بھی حلقے کے مختص ترقیاتی فنڈز کا بجٹ ایوان میں پیش کرنا ہوتا ہے۔ آئین کے مطابق وزیراعظم اور وزیر اعلی ذاتی اختیار سے فنڈز نہیں دے سکتے، ترقیاتی منصوبوں کے لیے فنڈز سپلیمنٹری گرانٹ کی صورت میں دیے جاسکتے ہیں۔

You might also like

Leave A Reply

Your email address will not be published.