ایمازون کا 18 ہزار سے زیادہ ملازمین کو فارغ کرنے کا اعلان

0 46

ایمازون کا 18 ہزار سے زیادہ ملازمین کو فارغ کرنے کا اعلان

دنیا کی سب سے بڑی ای کامرس کمپنی ایمازون نے 18 ہزار سے زیادہ ملازمین کو نکالنے کا اعلان کیا ہے۔

انہوں نے بتایا کہ ملازمین کی چھانٹی کا آغاز 18 جنوری سے ہوگا جبکہ ای کامرس اور انسانی وسائل کے شعبے زیادہ متاثر ہوں گے۔

ایمازون کے ملازمین کی تعداد 15 لاکھ سے زیادہ ہے اور یہ وال مارٹ کے بعد افرادی قوت کے لحاظ سے امریکا کی دوسری بڑی کمپنی ہے۔

نئے بیان میں یہ واضح نہیں کیا گیا کہ کن ممالک میں ایمازون کی جانب سے ملازمتوں میں کٹوتی کی جائے گی۔

اس سے قبل میٹا اور ٹوئٹر جیسی کمپنیاں بھی ہزاروں ملازمین کو فارغ کرچکی ہیں جبکہ گوگل کی جانب سے اس حوالے سے غور کیا جارہا ہے۔

ٹوئٹر کے بعد ایمازون کا اپنے 10 ہزار ملازمین کو برطرف کرنے کا ارادہ

ایمازون کے سی ای او اینڈی جیسی نے ایک میمو میں کہا کہ کمپنی کے 18 ہزار سے زیادہ افراد کی چھانٹی کی جارہی ہے۔
اس سے قبل ای کامرس کمپنی نے نومبر 2022 میں بھی ملازمین کی بڑی تعداد کو فارغ کیا تھا۔

اس وقت تعداد تو نہیں بتائی گئی مگر ایک رپورٹ کے مطابق 10 ہزار افراد کو نکالنے کا ہدف طے کیا گیا تھا۔

اس سے پہلے امریکی کمپنی نے کبھی اتنی بڑی تعداد میں ملازمین کو نکالا نہیں تھا۔

کمپنی نے افرادی قوت میں کمی لانے کی وجہ ‘غیریقینی معیشت’ کو قرار دیا۔

You might also like

Leave A Reply

Your email address will not be published.