اللہ تعالی جمعیت کی شکل جو نعمت دی ہے، اس کی قدر کرنی چاہیے،عبدالرحمن رفیق

0 2

کوئٹہ ( ویب ڈیسک) جمعیت علماء اسلام بلوچستان کے صوبائی امیر رکن قومی اسمبلی مولانا عبد الواسع، صوبائی سیکرٹری جنرل رکن قومی اسمبلی مولانا سید آغا محمود شاہ، صوبائی سرپرست مولانا حافظ حسین احمد شرودی، مولانا عبد الرحمن رفیق، رکن قومی اسمبلی مولانا کمال الدین، مولانا محمد سرور موسیٰ خیل،مولانا عبدالخالق مری،مولانا خورشید احمد،دلاورخان کاکڑ،حاجی عین اللہ شمس،حاجی غوث اللہ ، حاجی دین محمد سیگئی، حاجی رحمت اللہ کاکڑ، اراکین اسمبلی اپوزیشن لیڈر ملک سکندر خان ایڈووکیٹ،حاجی عبدالواحد صدیقی،حاجی محمد نواز خان کاکڑ، یونس عزیز زہری،اصغر ترین، سید عزیز اللہ آغا،زابد ریکی، اور دیگر نے جمعیت علماء اسلام پاکستان کے مرکزی رہنماء سابق صوبائی اور وفاقی وزیر مولانا امیر زمان کی وفات پر گہرے افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ مولانا امیر زمان پختہ نظریاتی وابستگی کا روشن چراغ تھے، ان کی رحلت سے جمعیت عظیم رہنماء سے محروم ہوگئی۔ صوبائی اور وفاقی وزارت کے منصب پر فائز ہوکر بھی کارکن کی شان رہے،مرحوم نے پوری زندگی پرچم نبوی تھام کر بےلوث جدوجہد کی تابناک تاریخ رقم کی، بلاشبہ اس نے مفکر اسلام حضرت مولانا مفتی محمود رحمتہ اللہ علیہ کے کاز سے وفا کا حق اداکرتے ہوئے ہرقسم کے حالات میں جمعیت علماء اسلام کے دفاع میں مظبوطی کے ساتھ کھڑے رہے۔ انہوں نے
کہا کہ مرحوم جرائت اور شجاعت کے ساتھ جمعیت کے پروگرام کے پرچار میں صف اول کا کردار ادا کرتے رہے، ایک مدبر اور مصلح سیاستدان کے طور پر اپنی ثابت قدمی اور قربانی کی بدولت علاقے میں جگہ بناکر صوبائی اور وفاقی وزیر کی حیثیت سے بلوچستان کی تعمیر وترقی اور نوجوانوں کو روزگار فراہم کرنے میں اہم کردار ادا کیا انہوں نے کہا کہ مرحوم ایک اسلام پسند اور ترقی پسند رہنماء تھے جنہوں نے ہر مشکل دور میں جمعیت علماء اسلام کا پرچم تھام کر پرامن سیاسی جد وجہدکی۔ جمعیت علماء اسلام ضلع کوئٹہ کے رہنماؤں نے مولانا امیر زمان کو زبردست الفاظ میں خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے کہا کہ اس میں کوئی شک نہیں کہ ہر ذی روح نے اس فانی دنیا سے کوچ کرنا ہے لیکن کچھ افراد کی جدائی کا صدمہ اس لیئے زیادہ گہرا ہوتا کہ ان کی زندگی کی اچھائیاں ناقابل فراموش ہوتی ہیں تاریخ کے اوراق میں وہ ہمیشہ زندہ شمار ہوتے ہیں، جمعیت علماء اسلام کی کسی تاریخی گوشے کا جب بھی تذکرہ ہوگا تو مولانا امیر زمان کا حصہ اس میں ضرور ہوگا جنہوں نے جمعیت طلباء اسلام کے پلیٹ فارم سے نہایت اخلاص اور متانت سے سیاست اسلامیہ کے تحت پاکستان کی اسلامی تشخص کیلئے قربانیاں دی ہیں جو نسل نو کیلئے مشعل راہ ثابت ہوں گی،اسی طرح بلوچستان کی تعمیر اور عوامی مسائل کے حل میں ہمیشہ معمار کا کردار ادا کیا ہے۔ انہوں کہا کہ مولانا امیر زمان کا سانحہ ارتحال جمعیت علماء اسلام بلوچستان کے کارکنوں کیلئے بڑا صدمہ ہے جو بہت افسردہ اور غمگین ہے ،جمعیت علماء اسلام کے کارکن اپنے اکابرین کی خدمات اور قربانیوں اور سیاسی جد وجہد کو رائیگاں نہیں جانے دے گی اور ان کا مشن جاری رہے گا۔

You might also like

Leave A Reply

Your email address will not be published.