ساکران روڈ حب خستہ حالی کا شکار

0 8
گزشتہ دنوں صبح جب آنکھ کھلی تو ناشتہ اور غسل کرنے کے فوری بعد اپنے کسی پرانے دوست سماجی کارکن عمران اللہ واہورہ کو کال کیا جو کہ ہمیشہ علاقائی سماجی کاموں میں ہمیشہ میرے شانہ بشانہ رہا کبھی یہ محسوس نہیں ہونے دیا کہ میں تنہا ہو ظاہر سی بات ہے آج کل کے خودپرستی کے دور میں بہت ہی کم ایسے دوست ہوتے ہے جو آپکے ہر ہاں میں ہاں ملاتے ہیں جو کہو اسکو کرنے کے لیے تیار ہوتے ہیں تو میں جلدی جلدی میں اسکے گھر کے طرف چل پڑا گھر کے باہر عمران میرا انتظار میں کھڑے تھے تب وہ مجھے دیکھا اور کہاں کہ حماد بھائی آج اتنی جلدی میں لگ رہے ہو خیر تو ہے کوئی کام ہے تو میں نے جواب دیا جی ہاں آپ بس بیٹھوں چلو تو موسم بھی بہت خوشگوار تھا حب شہر کا ہم ساکران کے طرف نکل پڑے کسی وقت ہم حب شہر سے ساکران تقریبا 15 منٹ پہنچ جاتے تھے مگر کئی عرصے سے ساکران روڈ خستہ حالی کا شکار ہے جس کی وجہ سے ہمیں تقریباً آدھے گھنٹہ ہوا تو ہم ماموں ہوٹل پہنچ گئی وہاں پر پہنچتے ہی پیاس لگ گیا قریب دکان سے کولڈ ڈرنک خرید کر سامنے ساکران کے مشہور پکوڑے کھاکر پوری سفر کی تھکاوٹ دور ہوگئی تو دوبارہ حب شہر کی طرف نکل پڑے ماموں ہوٹل سے حب شہر تقریباً 8 کلومیٹر دور ہے یہ 8 کلومیٹر کا روڈ ٹوٹ پھوٹ کا شکار ہے جگہ جگہ پر گھڑیں پڑ چکے ہیں تو جو کہ ضلعی انتظامیہ نے کئی جگہوں پر گھڑوں کے اندر مٹی گرادی ہے گردوگبہار اڑنے کی وجہ سے اس روڈ سے گزرنے والے شدید پریشانی سے دوچار ہے دوران سفر یہی روڈ پر کسی مقام پر کھڑے ہوکر ایک روڈ کی ویڈیو بناکر سوشل میڈیا میں آپلوڈ کردی کیونکہ مجھے بہت ہی دکھ ہوا کچھ دن پہلے جب میرے گھر مہمان آئے تھے تو میں باہر انکے لیے کچھ کچھ کھانے پینے کی اشیائ لینے گیا تو ساتھ ہے ہی فروٹ کی ایک سوزوکی کھڑا تھا میں نے اسکو کہاں مجھے مالٹا دیدو دو کلو تب اس نے مجھے پہچان کر کہاں بھائی اس روڈ کے لیے بھی آواز اٹھاو ¿ ہمارا ستیا ناس ہوگیا ہے جب بھی یہاں سے گھر جاتے ہے غسل فرض ہوگیا ہے کرونا وائرس سے بچاو ¿ کے لیے ہاتھ دھونا پڑتا ہے مگر ہم دھول مٹی سے کافی بچنے کی کوشش کرتے ہے پھر بھی گھر جاتے ہے غسل فرض ہوجاتا ہے تو اس وقت مجھے بہت دکھ ہوا کہ واقعی اس روڈ نے بہت تنگ کیا ہے تو وہاں میں نے اسی پھل فروش کو کہا کہ چلو روڈ بند کرتے ہے آپ لوگ ساتھ دو تو میں کچھ کرونگا ادھر حب کے لوگ ایسے ہے کہ میں نے کچھ سال قبل پانی کے مسلہ پر کہا تھا کہ احتجاج کرینگے تو کچھ لوگوں نے مجھے واضح کہہ دیا تھا میرا گھر پر بورنگ لگا ہے میرا مسلہ نہیں ہے آپ لوگ کرو تو وہ پھل فروش ہنسنے لگا بولا ہاں بھائی یہ حقیقت ہے یہاں کے کافی سارے لوگ ایسی ہی ہیں ساکران روڈ حب شہر کا سب سے مصروف ترین روڈ ہے کیونکہ ساکران روڈ حب شہر کو ایک طرف لیڈا جو بلوچستان کا سب سے بڑا صنعتی زون ہے فیکٹریوں کے گاڑیوں کا آنا جانا دوسرے طرف حب کے جو زرعی علاقہ ساکران حب ڈیم اور تعصیل دریجی سب تحصیل سارونہ شاہ نورانی کو حب سے کنیکٹ کرتا ہیں ان علاقوں کے لوگوں کا آنا جانا اسی روڈ کے زریعے ہوتا ہے یونین کونسل ساکران جو کہ حب شہر سے تقریباََ 9 کلومیٹر کلومیٹر کے فاصلے پر ہے یہاں کے لوگوں کی بڑی تعداد حب میں مختلف سرکاری اور غیر سرکاری اداروں میں کام کرتے ہیں جنکا صبح و شام اسی سڑک سے آنا جانا ہوتا ہے اور ساکران کے جو اسٹوڈنٹس ہے وہ بھی حب اور کراچی جاتے ہے تعلیم حاصل کرنے ساکران ایک زرعی علاقہ ہونی کی وجہ سے یہاں کے زمیندار اپنی تیار فصل اسی سڑک کے زریعے حب اور کراچی لے جاتے ہے دنیا کے کسی بھی ملک میں اگر جاکر دیکھ لے تو وہاں زمینداروں و کاشتکاروں کو ہمیشہ سہولیات دیا جاتا ہے کیونکہ زمیندار اور کاشتکار ملک میں زرعی شعبہ کے ترقی کے لیے اہم کردار ادا کرتے ہے دنیا کے جتنے بھی ترقی یافتہ ممالک ہیں انہوں نے ہمیشہ زراعت کے شعبے کو مضبوط کرکے پی ترقی حاصل کی ہے زمینداروں و کاشتکاروں کو بلاسود قرضے دیئے جاتے ہیں بجلی و پانی کے بل پر نرمی کی جاتی ہے ہمارے ملک میں کاشتکاروں کو سود پر قرضے دیئے جاتے ہے جو کہ کاشتکار مقروض ہوچکے ہے کیونکہ جب انکا فصل تیار ہوجاتا ہے منڈی میں ریٹ گرادیا جاتا ہے پڑوسی ملک سے سبزیاں درآمد کیا جاتا ہے جوکہ انکے ساتھ سراسر ظلم ہے ساکران کے زمیندار آج بھی غربت کے لکیر سے نیچے کی زندگی بسر کررہے ہے انکو آنے جانے کے لیے سڑک ٹوٹ پھوٹ و خستہ حالی کا شکار ہے جگہ جگہ گہری گھڑیں پڑ چکے ہیں کئی مرتبہ اس روڈ کی خستہ حالی کی وجہ سے حادثات رونما ہوگئی ہے جنکی وجہ سے قیمتی جانی نقصان کا ضیاع بھی ہوتا رہا ہے ایک طرف صنعتی زون دوسرے طرف ایک زرعی علاقہ تیسری طرف سیاحتی مقامات اور چوتھی طرف ہمارے اس حلقے سے منتخب ایم پی اے کا گھر ہے وہ بھی اسی روڈ سے گزرتا ہے میں نے کئی دفعہ دیکھا ہے اسکو اس بات کا معلوم ہونے کے باوجود انکی خاموشی سمجھ سے بالاتر ہے کیونکہ یہ روڈ انتہائی اہمیت کا حامل روڈ ہے چھٹیوں کے روز کراچی سے سیاح سحر و تفریح کے غرض سے بڑی تعداد میں حب ساکران کا رخ کرتے ہیں گزشتہ سال اس روڈ کے ایک کلومیٹر کو تعمیر کیا گیا مگر ٹھیکیدار کی جانب سے ناقص میٹیریل کے استعمال اور بارشوں کی وجہ سے وہ روڈ چند مہینے کے اندر دوبارہ کئی مقامات پر ٹوٹ پھوٹ کا شکار ہوگیا اور کئی مقامات پر گھڑیں پڑ گئی اب اس کا زمہ دار ہم ایک ٹھیکیدار کو بھی نہیں ٹہرا سکتے کیونکہ وہ ہمیشہ یہی موقف دیتا ہے کہ آدھے سے زیادہ پیسہ اوپر سے کمیشن کے نظر ہوجاتا ہے باقی جو بچتا ہے ہم کوشش کرتے ہے اچھا کام ہو ہم حب کے عوام نیب سے گزارش کرتے ہے کہ وہ حب میں جاری ترقیاتی منصوبوں پر تحقیقات کا آغاز کردے کیونکہ زرائع سے یہ معلوم ہوا ہے کہ ترقیاتی منصوبوں پر کروڑوں روپے کی کرپشن ہورہا یہ ترقیاتی فنڈز عوام کا پیسہ ہے کسی کی باپ کی جاگیر نہیں عوام کا پیسہ بلکل دیانتداری کے ساتھ عوام پر اگر خرچ ہو تو یہ شہر کی بہت ہی جلد تقدیر بدل سکتے ہیں آخر میں میری وزیر اعلی بلوچستان نواب جام کمال خان صاحب ، صوبائی وزیر بلدیات بلوچستان سردار محمد صالح بھوتانی صاحب سے درخواست سے کہ ساکران روڈ کو دوبارہ تعمیر کیا جائے 2021 کا جو پی ایس ڈی پی ہے اس کے اندر اس روڈ کو رکھا جائے یہ حب و ساکران کے عوام کا دیرینہ مطالبہ ہے
You might also like

Leave A Reply

Your email address will not be published.